spacer
Home Page

Dr Shahid Masood Khan

Dr Shahid Masood Khan
Anchor
Born: N/A
Profession: Tv Anchor, Journalist
Affiliation(s): News One
Citizenship: Pakistani
Views: 88,133 | Comments: 50 | Votes: 66
Rate this Profile:
Related Videos Related Videos
How Warmly Indians Welcomed Chinese President and His Wife, Dr. Shahid Masood Telling
How Warmly Indians Welcomed Chinese President and His Wife, Dr. Shahid Masood Telling
Duration: 00:02:25 | Views: 1,261
Comments: 0 | Votes: 1
Live With Dr. Shahid Masood - 18th  September 2014
Live With Dr. Shahid Masood - 18th September 2014
Duration: 00:33:41 | Views: 15,241
Comments: 73 | Votes: 49
Live With Dr. Shahid Masood - 17th  September 2014
Live With Dr. Shahid Masood - 17th September 2014
Duration: 00:35:16 | Views: 23,053
Comments: 108 | Votes: 33
Dr. Shahid Masood’s interesting analysis on PTI Dharna and Government’s management.
Dr. Shahid Masood’s interesting analysis on PTI Dharna and Government’s management.
Duration: 00:21:40 | Views: 3,777
Comments: 0 | Votes: 5
Live With Dr. Shahid Masood - 16th  September 2014
Live With Dr. Shahid Masood - 16th September 2014
Duration: 00:37:11 | Views: 23,405
Comments: 65 | Votes: 61
Live With Dr. Shahid Masood - 15th  September 2014
Live With Dr. Shahid Masood - 15th September 2014
Duration: 00:33:38 | Views: 21,881
Comments: 63 | Votes: 25
Who are the Writer of Azadi and Inqilab March ?? – Dr. Tahir-ul-Qadri Telling
Who are the Writer of Azadi and Inqilab March ?? – Dr. Tahir-ul-Qadri Telling
Duration: 00:04:16 | Views: 1,713
Comments: 0 | Votes: 5
Live With Dr. Shahid Masood - 14th September 2014
Live With Dr. Shahid Masood - 14th September 2014
Duration: 00:32:49 | Views: 21,529
Comments: 8 | Votes: 61
 
Profile Profile
Dr Shahid Masood Khan commonly known as Dr Shahid Masood, is one of the most famous Pakistani journalist, columnist, TV show host and a political analyst.

Early life
Shahid Masood spent most of his childhood in Taif and Riyadh, Saudi Arabia. His father was a civil engineer, who worked there for 15 years.

Education
He attended the Pakistan International School, Riyadh, for seven years. Two of his younger brothers were born in Saudi Arabia. He received an FSc from DJ Science College, Karachi, and subsequently attended Sindh Medical College receiving a MBBS degree.

ARY One World
He had been affiliated with ARY One World, as its Senior Executive Director and was the chief of ARY One World conducting the show Views On News on ARY.

Geo Tv
He was host the most popular show "Meray Mutabiq" (According to me) on Geo TV as Group Execuitve Director.

PTV
He also parted ways with Geo TV for unknown reasons. He was then appointed the Chairman and Managing Director of state -run Pakistan Television Corporation.

Special Advisor to the Prime Minister

He resigned from that Chairman of PTV and was appointed as Special Advisor to the Prime Minister Yousaf Raza Gillani.He resigned again as Special

Advisor to the PM and came back on the TV screen again with his popular talk show"Meray Mutabiq" on GEO TV.


ARY Digital
On June 3, 2010 Dr. Shahid Masood rejoines ARY Digital as President.

Views on News on ARY
Shahid Masood came into the spotlight with his program Views On News (launched after 9/11) Asia’s longest-running current affairs TV show.His show carried interviews with prominent people from politics, civil life, literature and culture. Politicians who were interviewed on Views on News included
  • Former President General Pervez Musharraf,
  • Former Prime Minister Benazir Bhutto,
  • Former Prime Minister  Nawaz Sharif,
  • Former Prime Minister Shaukat Aziz,  
  • Former Prime Minister Mir Zafarullah Khan Jamali,
  • MQM leader Altaf Hussain,
  • PML-N leader Shahbaz Sharif,
  • Former  Pakistani general A. A. K. Niazi (of East Pakistan fame),
  • Abdul Rashid Ghazi,
  • Former CIA Director James Woolsey,
  • Former ISI chief Hamid Gul
  • President Asif Ali Zardari

Famous writers, who had appeared on the show include
  • Ahmed Faraz (late)
  • Dr. Israr Ahmad (late)
  • Dr. Zakir Naik
  • Ashfaq Ahmed (late)
  • Ahmed Nadeem Qasmi
  • Munnoo Bhai,

Late Nawab Akbar Khan Bugti along with his most wanted Balouch rebel grandson Bramdagh Bugti. It was Nawab Bugti's last public appearance before he was killed in a military operation by the Pakistan Army.

After a long break on 12th July 2010 he resumed hosting his show "Views On News".

Meray Mutabiq on GEO TV
On January 2007, Shahid Masood joined Geo TV, which is owned by the Jang Group, the largest Urdu media group.

GEO banned by General Musharraf
In late 2007, GEO Television was banned by General Musharraf after the imposition of emergency rule.

Meray Mutabiq not resume
However, even fter the restoration of GEO's transmission Masood's show did not immediately resume. The lack of explanation led many to believe that the network had struck a deal with the government, casting a shadow of doubt on GEO's claim of being a truly independent network in Pakistan.

Meray Mutabiq resume
Masood returned to the air in the mid-April 2008, and hosted an  interview with Asif Zardari.

On War on Terrorism

Ever since 9/11, Masood has been severely critical of the American-led War on Terrorism,although he never supported militancy or extremism. He routinely tends to analyze important issues along controversial lines, such as the Afghanistan,Iran, Iraq and the 2006 Lebanon War.He was the only independent Pakistani journalist who was able to cover three major wars from the combat zones.

Post Your Comments
Please do not use indecent language while giving your valuable comments.
Your Name*:
Your Email:
Comments*:
Prove to be a Human. Enter given characters below *:
 

Submited By: Tabassum
10 September 2014

Dear uploader, all these videos have time lag between audio and video. zemtv has much better uploads of this show.
Submited By: Hamid
03 August 2014
Dear Sir,
I've been watching since yrs & do believe that u hve the info in depth but the way u narrate isn't too pleasant as less attention paid to a sequenced info-sharing! The co-anchor seems simply a puppet! May Allah bless u!
Submited By: Abdul
24 June 2014

Dr. Sahib

I have been watching you for decades.

Initially I BELEIVE WHAT you were saying in your programs.

You have been giving dates for end of Zardari's (PPPP) govt but it never happend.

So please don't misslead us again.

The informtion you providing shows that you are well infornd.

But I firmly believ that your job is to destabilize the Pakistan and your havely paid by anti Pakistan elements.
Submited By: POLITICS IS BUSINESS IN PAK
21 May 2014
PML-N Government is using GEO and courts as tools against military Establishment [ISI + Army] . some other channels are supporting establishment. In the past tenures, PML-N has fought against establishment directly now it is using media Channels and COURTS as vehicles.

Pakistani courts are CENTERS for DALALI [Who pays higher $$$ gets order in favor]. It is usually said: 'Contact with a judge directly rather than hiring a lawyer'. Still 100 % true even for the higher courts.Look Ifthikhar Ch. earned $$$ through his son and relative Dr. Amjad - EDEN group]. Pakistani courts are really BLIND but toward poor and not against influential people.

Ifthikhar Ch. supreme courts & today's courts are PML-N courts [NORA Courts].
Submited By: Shan
11 May 2014
Dear Dr. Sahib:

As always good show but with all due respect, I think the show is

(1) Missing continuousness and clarity in the talk or topic you talking on.

(2) It is always all over and everywhere which causes you Dr. Sahib not completing on the topic you are speaking on.

Good example – you might be talking on a topic but it is not complete due to break. Once you come back from commercial break, you are not on the same topic.

(3) Your co-host is not asking the correct question or leading THE topic. She is most of the time asking the same question in different ways, which I return causes you to end up everywhere and all over issue but without a solid clarify and news.

Her questions and Dr Sahib app ka experience & knowledge do not balance and match.

Sir with all due respect, if you think I am wrong, PLEASE PLEASE WATCH SOME YOUR OWNS SHOWS AND YOU WILL SEE WHAT I AM TRYING TO EXPLAINE OR SAY HERE.

Allah Hafiz.

All the best and continue success on what you do for everyone who watches all over the world.
Submited By: Maj (r) M. Arif Hashmi
21 April 2014
THE FOURTH OPTION

A nation who forgets its past, endures the worst in present, but closes its mind and eyes again to a dreadful future as it has learnt to live on but empty promises. Its leaders trying to create their own empires to be worthy called as emperors as they have learnt how to fool this nation through themselves and now in their new coming up political siblings who have already and recently taken over from their fathers to be rightly called as one politician puts it – a new breed of computer generated corrupt mafia. The older and the younger regimes have now only one agenda to demoralize the only stable institution at all cost – even to the peril of the country existence so that their world of corruption rules supreme. There was a third option in the supreme, but how can a person who throughout his carrier gets the option to defend the wrong can now grow up in a chair to defend the right only – taking the example of ex chief of the Supremes. The present regime came to power not because of their love for the country or the poor, but in promises that the prevailing regime was corrupt to the hilt and whenever they come to power, the wealth of the plunder of Pakistan will be brought back and make the poor prosperous. Alas, both the new and the old have joined together as not a word of corruption can kiss each other lips -quite clear that their empires to continue in their sphere of influence but a fair deal in dividing the envisaged plunder for the future.
The corruption has seeped deep down in the society – who is to blame for it. The murderers get away because the so called supreme defend their cases in the courts for money sake and the higher supreme lets the murderer and thieves off because of the law which they have themselves made carry all the snags. Just look at the face of every politician and affiliated mafia on the TV screen. Their choice of words with an under smile in making the poor public dump is evident from their faces and still they do not flinch. A common food hawker is skinning his own brethren - The poor is downing havoc on his next have not and haves, while the haves havoc on their haves and more on the have not. Morality has dwindled and any respectable is on the verge of committing suicide. Does prosperity come in by running busses and polluting the environment as it is again the act of mafia. What has happened to scores of busses lying unmaintained in the stands? Under developed countries have rails underground and in space to lighten the environment, but alas, us! The list if corruption is endless – it’s only for the one to weigh the standard who leads in corruption. The electricity scandal, the railway scandal, the AOB scandal, the bhatta (extortion) scandal, the land scams – in which the ex government is knee deep to acquire wealth for their future generations. Name any government functionary to be clear of any embezzlement and yet the TV anchors with naive faces and stories attached to the famous few being knee deep in scandal of receiving foreign aid with respected think tanks join in to malign the only organized and still efficient organized organization and the country savors – just to clear the way for further corruption and serve the new world order.
Three options gone, now what is the fourth option! I do not want to mention the fifth option as that would be too dreadful for all of us – The storming of the Bastille. The fifth option maybe will have a small part to play in the fourth option. The rising of a selfless group, who could prove its sincerity through ranks and not through wealth. One, whose call could be taken as a word of religion, a group who has just one agenda – ‘all corrupt to be brought to books’ – It may be from any walk of life, the forces, the politicians, the judiciary, the central and the provincials. A single and swift action in which no individual should escape. All the plunderers from top to bottom wither in any functionary to be hauled up. Held high up and upside down from their feet, till they cough all the wealth out. Who can stand up to bullet if you are on the wrong side? All who bring their wealth back to the country and submit in fair allowed to live, otherwise Khomeni - the answer. Law to be supreme. No Wadera, no Chaudhry, No Malik, no Khan and no pardons – only PAKISTAN.

Maj (Retd) Mohammad Arif Hashmi
Submited By: Amir Mahmood Anwer
29 October 2013
Dear Sir,
I hope you will fine with God Almighty Grace. and God Almighty bless your all efforts with success against lustful and blackguard of society.
I like you and love you because you are an honorable man in the field of journalism. and i appetite your all brave efforts against highlighting all those peoples who are deed drunks and black guard of society and bad stain on Islamic society.
there is a man , i said he is luster and black guard,whose name is Mr Afzal Bhatti having england nationality is political secretory of chief minister punjab......who disturb my life completely. .....
we elect the CM and PM by our own votes for our better future, but they played with our dignity and our respect by such peoples.
my brother martyred in 13 december 2012 in panjgore ....my mother was in state of grief when this person came in our home and misbehave and given threaten to all of our family and the bad story started whose end is endless,,,,,.............i send application to CM and PM but no reply because he is best friend of mr PM.
regarding this issue i want to meet you and explain my problem therefore CM and PM take an genuine justice action against this man.
therefore sir, please i need an appointment to put my case in front of you.
please give me your Phone no for appointment
thanks with best wishes
Sincerely
Amir Mahmood Anwer
S/o Muhammed Anwer
75- C, Railway Officers colony walton.
phone: 0333-4274270, 0311-4274370

Waiting for your appointment and well wishes
Submited By: khair andesh
27 June 2013
Assalam o Alaikum,



Mohtram ,



Kia Aamir, Dictator, Ghasib jese khitabat mazi ki kaiee muslim hukoomaton ya tarze hukumrani se mutasadim nahi ? Agar Tareekh e Islam ka mutala kia jae to kia ye ashakr nahi hota k bohat se muslim hukumran hakim e waqt k sath sath apni army ke sipah salar bhi rahe aur shandar tareekh raqam kar gae. Pehli Islami riasat Madina, riasat e Khulafa e Rashdeen, aur deegar bad azan hukumranoon ki aksairat bayak waqt donon office hold karti thi to ab ye khilafe shariat khitabat aur muhkalfat secular parties se ziada mazhabi parties ki taraf se kiyoon. Kia article 6 khilaf e shariat ya islami tareekh se mutassadim nahi ? Ye sawalat behes (debate ) ke mutaqazi hen.



Faqat

Khair Andesh Pakistani
Submited By: Dr. Muhammad Fasih Ud Din
13 May 2013
Dear sir,

I need your kind attention for one of my surrounding supreme issue...... i would like to discuss you in detail. so please send me your personal cell number so that i could discuss you in detail for its remedy.
Thanks
Dr. Muhammad Fasih Ud din
Submited By: Mohammad Ashraf
01 May 2013
Dr. Shahid Maqsood Khan Sahib Asalam o Aalakum!
Pakistan k buhat se masaile par aap na logo ko khara sach btayea har issue par baat ki. lekin afsoos k aap ma se kisi ankarr ki ikhlaaki jurrat nahi hui k pakistan k punjab k mazdooron ki baat ki jaye punjab k private factory maalkaan ki jo pichly 3 dahayeaon se har mazdoor ki kanooni choori ko awaam k saamnay layea jaye kahnay ko to buhat kuch ha lekin aap sarmayea daaron ki baat to kartay hain lekin jo aham tareen muamla mazdooron ka ha is mulak ma shaheed zulfkaar bhutto k ilaawa kisi ma jurrat nahi ha k woh mazdooron ka haqook ki baat karay aik baar idhar b to dayaan dain aur muj se pochain k is punjab ma private factory k maalkaan na kis tarah kanoon ka mazaak banayea hua ha aur is mulak k kanoon ko woh jhooti par b nahi likhtay . aap ma ma na kuch dekha ha is lye aap ko yeh msg da raha hoon agar himmat ha to is baray ma b kuch karain aur awaam ko kuch btayen......

Shukria.....

Mohammad Ashraf
Cell# 0324-6140852
Submited By: Syed Mazhar Ali Rizvi
02 April 2013
Dear Sorry to say u are not a journalist !
Thanks
Submited By: Khalid
20 March 2013
Future of Pakistan looks every blink with illegal election commission, Chief Justice relation of Rana Sana hullah (PLM_N), Zaidari as president - member of PPP.
Who say it wouldn't be fair electon.
Submited By: Khalid
20 March 2013
Future of Pakistan looks every blink with illegal election commission, Chief Justice relation of Rana Sana hullah (PLM_N), Zaidari as president - member of PPP.
Who say it wouldn't be fair electon.
Submited By: Khalid
16 March 2013
Please read the Nomination paper issued by Election commission of Pakistan.
pakistani people are going to be cheated again. It allowing the currupt people to come via back door. Save Pakistan.(Down with the stay orders ).
Submited By: Kausar Ali Shah
14 March 2013
On 5th March 2013 at 11 AM three persons namely Nosher Khan DSP of Mardan Police KPK Pakistan, Aman Ullah & Hayat Ullah residents of sector C Sheikh Maltoon kidnapped me in my own vehicle model 2012 Vigo number Islamabad 24 at the instance of Senator Muhammad Azam Khan Hoti the father of Chief Minister of KPK Pakistan, on gunpoint and locked me in Par Hoti Mardan KPK in Hujra room of Haji Dilawar Khan “Choopal”.
At three PM the door was unlocked by police constables and I was taken to a huge Hall where Azam Hoti, Amir Ghazan Khan Hoti, Aman Ullah ,Hayat Ullah, Inaam Jan SHO Sheikh Maltoon Nowsher Khan DSP Mardan police and said Rehman Tehsildar were present and I was brought before Azam Hoti as prisoner and he started beating me and abusing me and carried on my personal search take away almost ,everything I had, credit cards, bank cards , ID cards, purse, any money. Then persons namely Inaam Jan SHO, Aman Ullah and Nosher Khan DSP caught hold of me and Azam Hoti ordered to strip me while Hayat Ullah was holding cam. I pushed them off and was able to jump from the window but was caught on the roof by Nosher Khan DSP and Aman Ullah while Azam hoti followed. Azam Hoti in presence of police, general public and chief minister house escort ordered to throw me off the 30 feet roof and I was thrown off the roof resulting in leg fracture, body injuries and pain. The police officials on Azam Hoti orders dragged me inside the Hujra and I was thrown in the rear seat of police car, and SHO locked by injured leg in the car door obtaining signatures on 7 black stamp papers and then throw me to the mercy of God in front of gate. Take away three lac rupees from my pocket, my vehicle number 24 Islamabad and a BAG in the vehicle having money, bank cheques and everything.
Motive for the occurrence was EASY LOAD, and my Plaza at Sector E Sheikh Maltoon Town Mardan and ransom of 90 caror.
I was transported by my brothers reaching spot to CHM Nowshera as hospital in Mardan said NO to take me and then Shifa international Islamabad.
In like one day more than dozen false FIRs were lodged against me I went in media and please watch this http://www.youtube.com/watch?v=NUelnbkHhOA
I am on the run with all my family under security threat. All the news papers reports this story but nothing happened.
When I watch the TV programs on constitution I laugh at you and weep at myself that what are you talking about.
Please help me
Kausar Ali Shah
Submited By: Rana
30 January 2013
Dr. Sb,,,,We miss you, Please come again on the scene.
Submited By: Rana
30 January 2013
Dr. Sb,,,,We miss you, Please come again on the scene.
Submited By: Banojee
26 September 2012
Love U Dear Shahid Masood
O sir jee kider Ghaib ho gay ho
Submited By: danoujee*
07 September 2012
well best tv anchor*
Submited By: danoujee
07 September 2012
well best tv anchor
Submited By: Furqan Ahmed
28 August 2012
Dear Sir,

You are one of them who has chosen by God and for God's Programme for Future of Pakistan. This is not only comments but a fact which will be realize soon.
Submited By: 28IA H Raza
17 August 2012
آج آپ لوگوں کے سامنے اس شخص فیضل رضا آبدی حقیقت پیش کرنا چاھتا ھوں
۱۹۷۸کی بات ھے جب مجھے السٹرن فلم اسٹویو جو سائٹ کراچی میں ھے
جاب ملی إس ہی سلسے میں میرا آنا جا موڈرن اسٹوڈیو میں تھا
اداکاری کے شوقین مرد عورتوں کا آنا تھا
میں نے کئ لوگوں کو کامیاب اداکار بنتے دیکھاہے
جن میں بدر جاویدشیخ عمرشریف نیلما حسن خاض ہیں
اوربھی بہت سے لوگ ہیں لمبی لیسٹ ہے خیر
خیر تو ٹی وی اداکارا خالداہ ریاست کےساتھ اکسر اس کی
ایک رشتے دار آتی تھی
جسکا فرضی یا فلمی نام ادا دورانی لیا جاتا تھا
جو خوبصوت تو تھی مگر اداکاری میں نا کام تھی
خالدہ ریاست ٹی وی اداکارہ مرحوما اور موجوداہ صدرے پاکستان
آصیف علی زرداری ان کا معشوقا کون نہیں جانتا
اب ذکر کرتے ہیں خالداہ ریاست ٹی وی اداکارہ کی رشتے ادا دورانی کا
ادا دورانی کی جان پہچان زرداری سے خالداہ ریاست نے کرائ
ادا دورانی میں اداکاری کی صلاہیت نا تھی مگراسے فلموں
اور ڈراموں میں کام کرنے امیر بنے کا شوق تھا إس ہی
چکر میں وہ دن رات اسٹوڈیو گزارتی پیسوں کے بدلے لوگوں
کے ساتھ سوتی اسلامی جمہوری پاکستان کے موجودا صدر کو
بھی اس کے ساتھ سونے شرف حاصل ہوا ہے کئ بار
فیصل رضا آبدی اس ہی نام نیہاد ادا دورانی کا بیٹا ہے
Submited By: D awan
14 June 2012
http://www.facebook.com/aawan.malikd
جناب ایماندار ججز فخرالید ین جی ابراہیم ،،،، ناصر اسلم زاید اور جنہون نین آیین غداری ایل ایف او کا حلف نیین اٹھایا ۔۔۔ اور تمام ایماندار دوستون کے لیے
واہ جی واہ زیادہ وکلا اور ججز نیں تو خوبصورت فیصلہ دے دیہا
۱۔۔۔.اب تمام سرکاری ملازم بچوں کو کھلی اجازت دہ دیں اور خود ایمانداری سے نوکری کریں
خدا کا واسطہ یے اپنی برادری کو نان بچاو ایمان کو اور اللہ کے عزاب کو دیھکو
اصل حقیقت قانونی یہ یے----
۲..سرکاری ملازم جس نے ذرا سی تسکین حاصل کی ( شکریہ بی کبول کیا ) ڈائریکٹ یا ان ڈائریکٹ اس شخس سے جس کا معاملہ اس کے پاس یے تو کرپشن سابت ہو گیی
161 تعزیرات پاکستان
3--161 تعزیرات پاکستان تو لگے گی .سرکاری ملازم( چیف جٹس افتہخار صاحب) کے خلاف بہصیحت لنک اس شخص کے ساتھ جو ان ڈاریکٹ( ارسلان ) ملوس ہے اس شخس (ریاض ملک) سے جس کا معاملہ سرکاری ملازم( چیف جٹس افتہخار صاحب)کے کے پاس یے-
۴--162 --163 تعزیرات پاکستان لگے گی اس شخص کے. خلاف جسکا لنک سرکاری ملازم کے ساتھ یے- اور اس شخس (ریاض ملک) سے جس کا معاملہ سرکاری ملازم( چیف جٹس افتہخار صاحب)کے کے پاس یے
۵-- ۱۰۹ بھی لگے گی ،،،، چیتنگ اور فراڈ کی سیکشنز بھی لگین گی
۶ .. 161 PPC کو سا بت کرنین کے لیے مندرجہ زیل سبوت کافی یین اور اگر چیف جٹس افتہخار صاحب کے خلاف 161 PPC سا بت ہو ریی ہے تو ارسلان صاحب کے خلاف الزم اسانی سے سا بت ہو جا ہین گے ( مندرجہ زیل سبوت 161 PPC کے لیے ارسلان کو سپورٹ کے زرہیے چیف جٹس افتہخار صاحب کا لنک ،،اور ملک ریاض کے خلاف بلیک میلنگ اور دھمکی کو سا بت کرتا ہے)
۱........جس طرح کرکٹ کیس مین بکیز نین پیلے یہ سابت کرایا کہ عامر ،، اصف،،سلمان ان کے پینل پر یین ۔ اور انہون نیے ،، نو بال کرا کے،، کیچ چھو ڑ کر یہ سابت کیا ۔۔۔۔۔ بلکل اسی طرح چیف جٹس افتہخار صاحب نے یہ سابت کیا۔۔ عید کے موقہ پر اپنے بیٹے کے ساتھ جا کر او شخس کے پاس جو ملک ریاض کا پارٹنر یے
،ب۔۔۔۔۔میڈیا مین آنے کے بعد بیٹے کے خلاف ایکشن
،پ۔۔۔ 6 ماہ پیلے اعتزاز صاحب نے بتایا اور کوی ایکشن نین لیا
،ت۔۔۔ پاکستان مین جس سے رشوت لو اس کو ریلکس نین دیا جاتا تا کی بعد مین سبوت کے طور پر دیکھا سکین کہ کو ی ریلکس نین دیا گیا۔ پر پھر بھی پاکستان مین دیوانی مقدمون کے فیصلے ۱۰۰ سال تک نین ہوتے تو ریاض ملک کے خلاف فیصلے ہفتون مین ہونان یہ سا بت کرتا ہے کہ یہ بلیک میلنگ اور دھمکی کے لیے یے۔۔
،ٹ ...اب بھی سب کچھ ہونے کے بعد ملک ریاض کا ریکارڈ منگوانا اور ارسلان کے خلاف نان منگوانا یہ دھمکی نین تو کیا ہے۔
،ژ ،،،،۔۔تمام وکلا برادری اور ایمان والے یہ بتایین کہ ملک ریاض کے ان الزامات کے بعد چیف جٹس افتہخار صاحب کوی بھی مقدمہ ملک ریاض یا اس کی فیملی کے خلاف سن سکتے یین ۔۔۔ لیکن جس دن ملک ریاض عدالت مین پیش ہوا اس دن چیف جٹس افتہخار صاحب نے ملک ریاض کے خلاف مقدمہ سنا تو یہ ارسلان کے ساتھ دینان اور ملک ریاض کو دھمکانان نیین یے۔
،ج...فیملی سمیت لندن کی سیر ہوتی یے
،چ-- یہ کیس کسی بھی صورت مین ججز نین سن سکتے کیون کی سب ججز کی سیاسی مومنٹ کی وجہ سے وہ باحص یین اس لیے نیب یا ایف ای اے سے کرای جاے پھر بی یہ ججز سن رہین ہین
،ح۔۔۔۔۔۔ پہلے ہی دن کورٹ مین دھمکی دے کر ڈرانان کہ میرے بس مین ہوتا تہو دونون یعنی ریاض ملک کو جیل بھج دون ریاض ملک کو دھمکی نین یے
،خ۔ 161/109PPC کو چیف جٹس افتہخار صاحب کے خلاف خلاف اگر سابت ہوتا یے تو کیا یہ آیین سے غداری نہن یے...................................................................................۔اپ اللہ تعالی کے لیے حال دیکھین اور سا تھ ماضی دیکھ لین جو اس وقت حال تھا
۱...جب بی امریکا کے خلاف اور اب ۳ ماھ سے ناٹو کے خلاف ایکشن لیا یے عدالت کے زور گورنمنت کے خلاف زیادہ ہو گیا تو قصور سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے .
.۲۔۔ پہلے ہی دن کورٹ مین دھمکی دے کر ڈرانان کہ میرے بس مین ہوتا تہو دونون یعنی ریاض ملک کو جیل بھج دون سی جے صاحب کی اس دھمکی کے پیچھے بی قصور سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۳ ۔۔۔۔۔۔ میمو گیٹ مین کچھ بی نیین لیکن اب ارسلان کو بچانے کے لیے گورنمنٹ کے خلاف ہو گا یہ قصور سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۴ -- ایک پا رٹی کے خلاف جب کیس عمران اور اصغر خان نین کیس کھلوایا تو چیف جٹس افتہخار صاحب کے خلاف بھی مقدمین کھل گیے اور اسکے بعد ایک جلسے مین شہباز شریف صاحب نیے ایک جلسے مین دل کھول کر ملک ریا ض صاحب کی خوب تعریف کی،، یہ قصور سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
انصاف کی بات منہ سے نکالو
۵ ۔۔۔ 32سال کادودھ پیتا بچا ارسلان اگر۳ کروڈ ملک ریاض سے لے لیتا یے تو وہ بچا یے قصور تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۲ فیملی سمیت لندن کی سیر ہوتی یے اگر وہ تو سارے بچےیین قصور تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۷۔۔ ریاض صاحب اگر ایک سال سے اپنے مقدمات کی وجہ سے بلیک میل ہو رہے ہہن اور ان سے بجے ارسلان نین کروڑون روپے لے لیے ہہن اگر وہ تو بچا یے قصور تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۸۔ چیف جٹس افتہخار صاحب کہتے ہہن کہ وہ غریب ہہن ،جب ان کی فیملی کو دودھ پیتا بچا ارسلان باہر لیکر جاتا یے اور وہ پو چھتے نہہن ہین اگر تو قصور تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۵۔۔ کل دنیا کو پتہ ہے کہ ملک ریاض کے بہت سے مقدمات سپرہم کورٹ مین چل رہے ہہن اور اگر ۳۲ سال کادودھ پیتا بچا ارسلان ۳ کروڈ ملک ریاض سے لے لیتا یے فیملی سمیت لندن کی سیر ہوتی یےایک سال سے ملک ریاض کےداماد کے ساتھ گوم رہین ہین اور اگر چچیف جسڑس افتہخار صاحب کو پتا نہین چلتا تو قصور تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۶۔۔ چیف جسڑس افتہخار صاحب جب پیلی دفہ بحال ہوے اور ۷۰ فی صد الزمات ان کے خلاف ، مشرف صاحب نے واپس لیے اور وہ بھری ہوے اور اس کے بد لے مین چیف جٹس افتہخار صاحب نے آہین کے خلاف سب کی مخالفت کے باوجود وردی مہن الیکشن لڑنہن کی اجازت دی تا کی مزید ۵ سال حکموت کرے تو یہ قصور تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا
۷۔۔مشرف کی دوستی مہن چیف جسڑس افتہخار صاحب نے آہین کے خلاف غداری کرتے ہوے اہل اہف ہو حلف لیا کہون کے ارسلان کے ما میلے کی طرح وہ نا سمجھ تھے تو یہ قصور بھی سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۸۔۔چیف جٹس ا فتہخارصاحب نے ایک پارٹی کے حق مینن فیصلے دیے اور اب میران کیس بھی ان کے حق مین ہونا یے ہہ قصور بھی تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۹۔۔اب ارسلان بھر ی ہو جاہین گے ہہ قصور بھی تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا ہو گا
۱۰۔۔ایک وفاقی وزیر الزام مین ایک سال سے اندر ہے اس کی ضما نت نین ہو رہی ہےاس نا انصافی کا قصور بھی تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۱۱۔۔ اگر کسی نین بھی و ڈیو اور سب کچھ ریکارڈ کیا اس نین عوام کے سامنین لایا اس نین سب کچھ حق بتا کر غلط کیا تو یہ قصور بھی تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے

۱۲۔۔عتیقہ اوڈو کے خلار سو موٹو ہتا ہے ٹھیک یے لیکن اب تک یمنڈ ڈیوس کے خلاف نین ہتا یےیہ قصور بھی تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
......
۱۳۔۔جنگ اخبارکراچی ۱۰ فر وری صفحہ نمبر ۱۰ کالم نمبر ۴۴ کے مطابق ۔چیف جٹس ا فتہخارصاحب نے ایک کیس کے دوران ریمارکس پاس کیے کا ریمنڈ ڈیوس کیس ایک سیاسی معملہ یے ان کا یہ کینا بھی قصور بھی تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
.۱۴۔۔ .چیف جٹس افتہخار صاحب نے چیف جسڑس افتہخار صاحب نے آہین کے خلاف غداری کرتے ہوے مشرف صاحب کو ۳ سال کے لیے ایک شخس کو ایین مین ترمیمم کرنین کی اجازت دی ہہ قصور بھی تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے.....
۱۵۔۔اب ۳۲ سال عمر مین کوی جرم کرے تو کوی جرم نین
۱۶۔۔آیین کا حلف اٹھا کر چیف جٹس افتہخار صاحب نے چیف جسڑس افتہخار صاحب نے آہین کے خلاف غداری کرتے ہوے مشرف صاحب کو ۳ سال کے لیے ایک شخس کو ایین مین ترمیمم کرنین کی اجازت دی ہہ قصور بھی تو سارا زرداری اور گورمنٹ کا یے
۱۷۔۔۔۔۔۔ ملک ریاض کا وکیل بہت اچھا یےمگر وہ بھی وکلا برادری ساتھ دے گا
انصاف کی بات منہ سے نکالو...تا کہ اپ کےاور اپ کےخاندان کے ساتھ انصاف ہو
Submited By: hamzad afaqui
11 February 2012
Please Please Talk LESS..You are host..Speak in SOFT tone..DO NOT insult guests by interrupting them..DO not appear mor knowledgeable than guests..ASK..do'nt tell...and for Allah's sake DO NOT call yourself DOCTOR...let others do it....where is Daktari in interviewing?.. NO one calls themselves as Daktar in a society which we want to copy.....
Submited By: luqman rasheed
25 January 2012
1 feel you are not a good man are you..
Submited By: hamzad afaqui
20 January 2012
so many people are advising you so many times:

1.PLEASE DO NOT introduce yourself as "DOCTOR"..let others call you such..In slavelands they call themselves Daakter, General (retarded etc)...decent societies do NOT do this.

2. YOU are a HOST; let OTHERS TALK..DO NOT interrupt..you insult viewers and guests by showing off..and , by the way, listen to your voice someday..it is onnoxious..not pleasant..so RESTRAIN yourself..if this sounds bad advice..JUST ask your wife and children for a frank opinion.
Submited By: aishjaann
18 December 2011
GOOD WORK DR Sahib .. GOD BLESS YOU AND PLEASE DON'T BRING CORRUPT POLITICIANS IN UR PROGRAMS.. DON'T LIFT BLOODY***HOLES .. TC..
Submited By: Shahabkhan
20 November 2011
You have lost your credibility by your own acts.
It is good that you exposed yourself otherwise many were in the wrong impression about you. You happened to be a failed opportunist. Your price tag is so low and even after there is no buyer.
Submited By: Zaheer Saghir Qurashi
12 November 2011
mein ap ka parogum bot acha lagta hain
gasker ap jub geo ke progam "mere mutabk" main aty te .
Submited By: Ayub
06 November 2011
It is the quality of DJarians to rise above normal. Mostly impressed by your intellects appeared on screen.

May Allah bless you more "Imani Taqat"
Submited By: MUHAMMAD
09 October 2011
اسلام مخالف جنگوں اور معاشی بد حالی کے نتائج

کئی ریاستیں ہمسایہ ممالک میں ضم ہونے کو تیار

امریکی و مغربی ذرائع ابلاغ کی رپورٹیں

امریکہ اور اسکے حاشیہ بردار ممالک، تھنک ٹینک ادارے اور شخصیات ایک عرصہ سے
پاکستان کیخلاف ایک پراپیگنڈہ وار یا نفسیاتی مہم چلا رہے ہیں۔ مختلف رپورٹوں اور بیانات میں تواتر سے یہ پیشین گوئیاں کی جارہی ہیں کہ پاکستان معاذاللہ بس چند دن یا چند برسوں کا مہمان ہے۔ کبھی کہا جاتا ہے کہ سعودی عرب اور پاکستان دنیا کے دو غیر فطری ممالک ہیں۔ کبھی ایسے نقشہ جات تیار کیے جاتے ہیں جن میں ان ممالک کو دوسرے ممالک میں ضم یا مدغم ہوتے دکھایا جاتا ہے۔

آجکل پاکستان کیخلاف اس پراپیگنڈہ وار میں انتہائی شدت آچکی ہے۔ پاکستان کے کسی بھی علاقے میں تھوڑی سی بھی بے چینی پیدا ہوجائے تو تو اسے ایک خوفناک طوفان سے تعبیر کیا جاتا ہے۔ حالانکہ یہ بے چینی بھی اسی دشمن کی اپنی پیدا کردہ ہوتی ہے۔

اس سارے قضیے میں یہ بات حیران کن ہے کہ ان کافر طاقتوں خصوصاً امریکہ کو اپنی ناک کے عین نیچے دیکھنا گوارا نہیں ہے۔

اگر کوئی یہ کہے کہ امریکہ آئندہ برسوں یا 2025ء تک ٹوٹ جائیگا یا اسکی ریاستیں بکھر کر الگ ہوجائیں گی، یونائیٹڈ سٹیٹس میں یونائیٹڈ تو کیا امریکہ کا لفظ بھی نہیں بچے گا تو اس بات کو ایک دیوانے کی بڑ سے زیادہ نہیں سمجھا جائیگا۔

حقیقت یہ ہے کہ روس کے ٹوٹنے سے ایک دن پہلے تک بھی لوگوں کو یہ یقین نہ تھا کہ روس ٹوٹ جائیگا۔ وہ سوچتے تھے کہ اگر روس ٹوٹا بھی تو اسے ابھی کئی سو سال لگیں گے اور مستقبل قریب میں اس بات کا کوئی امکان نہیں ہے۔

لیکن پھر دنیا نے دیکھا کہ ہفتوں مہینوں میں ہی روس کا نقشہ بدل گیا۔ اسکی کوکھ سے چودہ مسلم ریاستوں نے جنم لیا اور یونین آف سوویت سوشلسٹ ریپبلک (USSR) میں صرف R یعنی روس یا رشیا رہ گیا۔

آج یہاں ہم حقائق پیش کرکے دنیا کو امریکہ میں تیزی سے ہونیوالی شکست و ریخت کا آئینہ دکھائیں گے۔

یہ بھی خیال رہے کہ ہم یہاں امریکہ کی تازہ معاشی بدحالی کے حوالے سے رپورٹیں پیش نہیں کر رہے۔ اگرچہ کہ یہ بدحالی بھی دن بدن بڑھتی جا رہی ہے اور اب نوبت یہاں تک پہنچ چکی ہے کہ اربن انسٹیٹیوٹ کی تازہ رپورٹ کیمطابق امریکہ میں عورتوں اور بچوں سمیت 35لاکھ شہری سڑکوں پر سوتے ہیں۔ رپورٹ کیمطابق امریکہ میں 35لاکھ شہری بے گھر ہیں۔ ان میں ساڑھے تیرہ لاکھ بچے بھی شامل ہیں۔ صرف نیویارک میں 37ہزار افراد جن میں 16 ہزار بچے بھی شامل ہیں، روزانہ مارکیٹوں کے چھجوں کے نیچے سونے پر مجبور ہیں۔ اس سے پہلے امریکہ کی انتہائی دگرگوں معاشی صورتحال کے بارے میں یہ رپورٹیں منظر عام پر آچکی ہیں کہ کس طرح امریکہ کے برے بڑے بینک دیوالیہ ہوچکے ہیں اور لاکھوں کی تعداد میں لوگ بے روزگار ہوچکے ہیں۔

لیکن اس تمام خطرناک معاشی صورتحال سے قطع نظر آئیے دیکھیں کہ سیاسی طور پر امریکی ریاستوں میں کیسی خوفناک صورتحال پیدا ہو رہی ہے۔ دنیا کیلئے (اگرچہ کسی ملک کی تباہی کیلئے یہی واحد عنصر کافی ہوتا ہے جیسا کہ روس کیساتھ ہوا) یہ بات کس قدر حیرتناک ہوگی کہ ایک جانب امریکہ دنیا بھر میں مختلف اقوام اور ممالک کی آزادی چھیننے کیلئ فوجی کاروائیوں میں ملوث ہے تو دوسری جانب خود امریکہ میں ایسے درجنوں گروپ اور جماعتیں قائم ہوچکی ہیں جو امریکہ سے اپنی ریاستوں کی مکمل آزادی کی جدوجہد کر رہی ہیں۔ اس سلسلے مین کئی جماعتوں نے امریکی وفاقی حکومت کے غیر معمولی اختیارات کے خاتمے اور امریکی ریاستوں کی مکمل آزادی اور علیحدگی کا حق دینے کیلئے قانون سازی کا مطالبہ کیا ہے۔

ان تنظیموں کا مؤقف یہ ہے کہ امریکہ کی وفاقی حکومت انکی ریاست سے جو ٹیکس وصول کرتی ہے اسکا بہت ہی کم حصہ ریاست کی فلاح و بہبود پر خرچ کرتی ہے جبکہ امریکی حکومت امریکی عوام کے ٹیکسوں کی آمدنی سے دنیا کے مختلف حصوں میں جو بھی فوجی کاروائیاں کررہی ہے اس کا بوجھ ٹیکسوں کی شکل میں امریکی عوام پر ہے اور انھیں شدید معاشی و اقتصادی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

ایک امریکی مصنف جیرڈ ڈائمنڈ نے اپنی کتاب (The Collaps زوال) میں امریکہ میں علیحدگی پسند رحجانات کی نشاندہی کرتے ہوئے لکھا ہے کہ اامریکہ میں سیاسی ٹوٹ پھوٹ شروع ہو گئی ہے اور امریکہ آئندہ پانچ سے دس سالوں میں سوویت یونین کی طرح بکھر جائیگا۔ جیرڈ ڈائمنڈ نے اسکی چار بڑی وجوہ بیان کی ہیں جن میں سرفہرست اقتصادی وجوہات ہیں۔ جیرڈ ڈائمنڈ کا کہنا ہے کہ امریکہ اقتصادی طور پر کھوکھلا ہوچکا ہے اور اسکی معیشت مندی کا شکار ہے۔ اسکی سرحدیں وسیع ہوچکی ہیں اور وہ اپنی ریاستی حدود میں مزید توسیع کیلئے وہی غلطیاں دہرا رہا ہے جو اس سے پہلے تباہ ہونیوالی سلطنتوں نے کیں۔

امریکی حکومت دنیا بھر میں ہونیوالی فوجی کاروائیوں میں ملوث ہے اور اسکے بجٹ کا ایک بڑا حصہ فوجی اخراجات پر مشتمل ہے۔ امریکی عوام شدید اقتصادی مشکلات کا شکار ہیں۔ انھیں ناانصافی اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سمیت بدترین اقتصادی پریشانی کا سامنا ہے۔ لیکن ایلیٹ کلاس یعنی طبقہ اشرافیہ کو انکی کوئی پرواہ نہیں۔

امریکی سکالر اور کئی کتب کے مصنف کرک پیٹرک سیل نے اپنی کتاب

The Collapse of American Empire

پیٹرک سیل نے لکھا کہ اسوقت امریکی اداروں کا شمار دنیا کے انتہائی بدعنوان اداروں میں ہوتا ہے۔ عوام انصاف کے حصول کیلئے ترس رہے ہیں اور ساری دنیا کو انسانی حقوق کا درس پڑھانے والا امریکہ خود اپنے عوام کے بنیادی حقوق غصب کرنے کیلئے قانون سازی کررہا ہے۔ انھوں نے لکھا کہ امریکہ کی صنعتی ترقی نمائشی ہے کیونکہ اسکی مجموعی قومی پیداوار میں صنعت کا حصہ صرف 13 فیصد ہے۔ امریکہ کو 13 ارب ڈالر کے خسارے کا سامنا ہے۔ اب وہ چین سے 83 ارب ڈالر کا قرض مانگ رہا ہے تاکہ اسکی ادائیگیوں کا توازن بہتر ہوسکے۔ دوسری جانب امریکی وفاقی بجت کو 700ارب ڈالر کے خسارے کا سامنا ہے۔ امریکہ جو ساری دنیا کو قرضہ دیتا تھا اب خود 10کھرب ڈالر کا مقروض ہے۔

کرک پیٹرک نے لکھا ہے کہ امریکہ پر دنیا بھر میں فوجی کاروائیوں کے اخراجات کا ایسا بوجھ ہے جو اسے تباہ کرنے کیلئے کافی ہے۔ اسوقت 4لاکھ 46 ہزار فوجی دنیا بھر میں 725 فوجی اڈوں پر تعینات ہیں اور یہ فوجی ادے دنیا کے 38ممالک میں واقع ہیں۔ دنیا بھر میں پھیلے ہوئے امریکی بحری بیڑوں کی تعداد ایک درجن سے کم نہیں۔ یہی وجہ ہے کہ امریکی عوام کی پریشانیوں اور مشکلات میں دن بدن اضافہ ہورہا ہے اور اسکے نتیجہ میں اب امریکی دانشور اور سکالر یہ سوچنے پر مجبور ہوگئے ہیں کہ کیا امریکہ دنیا بھر میں جو جنگیں لڑ رہا ہے کیا وہ اسکی سلامتی کیلئے ضروری ہیں بھی یا نہیں۔

چنانچہ گزشتہ دنوں دو امریکی اداروں زوگبی اور مڈل بری انسٹیٹیوٹ کے زیر اہتمام مختلف امریکی ریاستوں میں یہ سروے کیا گیا کہ کیا امریکی ریاستوں کو وفاق سے الگ ہوجانا چاہیئے۔ سروے کے نےائج کیمطابق 22 فیصد رائے دہندگان نے رائے دی کہ ہر امریکی ریاست کو امریکہ سے علیحدگی کا حق حاصل ہے اور اگر وفاقی حکومت عوامی مسائل کو حل کرنے میں ناکام رہی تو پھر ہر ریاست کو اپنے عوام کی فلاح و بہبود اور اقتصادی بہتری کیلئے وفاق سے علیحدہ ہوجانا چاہیئے۔

کرک پیٹر کا کہنا ہے کہ اس موضوع پر ہرسال سروے ہوتا ہے اور گزشتہ سال کے دوران امریکہ سے علیحدگی کے حق میں رائے دہندگان کے تناسب میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔
انھوں نے لکھا ہے کہ 1990ء کے عشرے میں صرف 5فیصد امریکی علیحدگی کے حامی تھے لیکن اب انکا تناسب بڑھ کر 22فیصد یعنی چار گنا تک ہو چکا ہے۔ کرک پیٹرک سیل کا کہنا ہے کہ قانونی طور پر صرف تین امریکی ریاستوں رہوڈز آئی لینڈ، نیویارک اور ورجینیا کو امریکی وفاق سے علیحدگی کا حق حاصل ہے۔ امریکی وفاق کی اہم ترین دستاویز یعنی دسویں ترمیم میں امریکہ میں شامل ہونیوالی ریاستوں کے علیحدہ ہونے کے بارے میں کوئی تذکرہ شامل نہیں ہے۔

جب جنوبی ریاستوں نے انیسویں صدی میں امریکہ سے علیحدہ ہونیکی کوشش کی تو یہ مسئلہ امریکی کانگریس میں اٹھا اور کانگریس نے علیحدگی پر پابندی لگا دی۔ لیکن امریکی آئینی ماہرین کانگریس کی اسی قرارداد کی بنیاد پر کہتے ہیں کہ کانگریس اگر علیحدگی پر پابندی لگا سکتی ہے تو علیحدگی کی اجازت بھی دے سکتی ہے۔

کرک پیٹرک سیل کا کہنا ہے کہ اگر کوئی بھی امریکی ریاست مثال کے طور پر کیلیفورنیا وفاق سے الگ ہونیکی کوشش کرتی ہے تو کیا امریکی فوج اس ریاست کے عوام پر اسی طرح گولیاں چلا سکتی ہے جسطرح اس نے فلوجہ یا بغداد کے بے گناہ شہریوں پر چلائیں، یا جسطرح اس نے ویت نام اور افغانستان میں عام شہریوں کا قتل عام کیا۔

اسوقت کم از کم 17 امریکی ریاستیں ایسی ہیں جو وفاق کو ٹیکس ادا کرتی ہیں لیکن اس سے کہیں کم ان پر خرچ کیا جاتا ہے اور انھیں ریاستوں میں علیحدگی کے شدید جذبات موجود ہیں۔ مثال کے طور پر اگر کیلیفورنیا امریکہ سے الگ ہوجاتا ہے تو اسکی ٹیکسوں کی آمدنی میں 232فیصد کا اضافہ ہوجائیگا۔

کرک پیٹرک نے اہنی کتاب میں ان تنظیموں کے نام بھی شائع کیے ہیں جو اپنی ریاستوں میں امریکہ سے علیحدگی کی مہم برے زور و شور سے چلا رہے ہیں۔ ان تمام جمعتوں، تنظیموں اور گروپس کی اپنی ویب سائیٹس بھی ہیں اور یہ گروپس اپنے رسائل، اخبارات اور ٹی وی چینل بھی چلاتے ہیں۔

ان میں سب سے بڑا گروپ امریکن سیکسیشن پراجیکٹ ہے جو آزاد الاسکا اور آزاد کیلیفورنیا کی مہم چلا رہا ہے۔ دوسرا بڑا گروپ مڈل بری انسٹیٹیوٹ ہے جو 2004ء میں نیویارک میں قائم ہوا اور اسکا مطالبہ ہے کہ اقوام متحدہ امریکہ کی 51 ریاستوں کو الگ الگ خودمختار ریاست تسلیم کرے اور انھیں رکنیت بھی دے۔ گروپ کا مطالبہ ہے کہ تمام امریکی ریاستوں کی علیحدگی کا حق آئینی طور پر تسلیم کیا جائے۔ تیسرا گروپ سویس کنفیڈریشن گروپ 2006ء میں قائم ہوا اور اسکا مطالبہ ہے کہ امریکہ کو ریاست ہائے متحدہ امریکہ کی بجائے ایک کنفیڈریشن قرار دیا جائے۔

مختلف ریاستوں کی علیحدگی پسند تنظیمیں

الاباما لیگ آف ساؤتھ سٹیٹ نامی تنظیم الاباما ریاست کی امریکہ سے علیحدگی کیلئے جدو جہد کررہی ہے۔

الاسکا انڈیپنڈنس پارٹ ریاست الاسکا کی آزادی کیلئے جدوجہد کررہی ہے۔ کیلیفورنیا کی آزادی کیلئے دو جماعتیں کام کررہی ہیں۔ ان میں ایک جماعت کیلیفورنیا ریپبلک ہے۔ اس جماعت پر امریکی حکومت نے پابندی لگا رکھی ہے۔ دوسری تنظیم کا نام کیلیفورنیز فار انڈیپنڈنس ہے۔ کساوڈیا کی آزادی کیلئے کام کرنیوالی ایک جماعت کا نام کساوڈیا انڈیپنڈنس پراجیکٹ ہے۔ یہ تین ریاستوں واشنگٹن، اوریگان اور برٹش کولمبیا کی آزادی کیلئے کام کر رہی ہے۔

جارجیا کی آزادی کیلئے تین گروپ کام کر رہے ہیں۔ ان میں جارجیا لیگ آف دی ساؤتھ، سدرن پارٹی آف جارجیا اور ڈکسی براڈکاسٹنگ شامل ہیں۔ ریاست ہوائی کی آزادی کیلئے پانچ گروپس کام کر رہے ہیں۔ ان میں فری ہوائی، ہوائی کنگڈوم، ہوائی نیشن، کالاہوئی ہوائی اور انسٹیٹیوٹ آف ہوائین افیرز شامل ہیں۔ لوزیانہ کی آزادی کیلئے کام کرنے والی تنظیم کا نام لوزیانہ لیگ آف دی ساؤتھ ہے۔ ریاست “مین“ کی آزادی کیلئے دو تنظیمیں کام کررہی ہیں جن میں فری مین اور سیکنڈ مین شامل ہیں۔

اسکے علاوہ جن امریکی ریاستوں میں علیحدگی کی تحریکیں شروع ہو چکی ہیں، انکے نام یہ ہیں:

نیو انگلینڈ
نووا کاڈیا
لبرٹی
نیو ہیمپشائر
لانگ ائی لینڈ نیویارک
نارتھ کیرولینا
اوہائیو
پنسلوانیا
پورتو ریکو
ساؤتھ کنفڈریٹ ریجن
ساؤتھ کیرولینا
ٹیکساس
ورمونٹ
منی سوٹا
وسکنسن
مشی گن

حال ہی میں امور خارجہ کے ایک روسی سکالر آئی گورپینارن نے یہ پیشین گوئی کی ہے کہ امریکہ جلد ہی ٹکڑے ٹکڑے ہوجائیگا۔ اس نئے عالمی منظر نامے کے بعد روس اور چین نئے عالمی لیڈر کے طور پر سامنے آئینگے۔

روسی وزارت دفاع کے خارجی معاملات کیلئے قائم ڈپلومیٹک اکیڈمی کے ڈین “آئی گور“ کے مطابق امریکہ کے حالات یکدم بہت زیادہ خراب ہونا شروع ہوجائینگے اور خانہ جنگی کی نوبت آ جائے گی۔ آئی گور کی حالیہ پیشین گوئی نے دنیا کی توجہ اپنی جانب مبذول کرا لی ہے۔

معروف امریکی جریدے، وال سٹریٹ جرنل کو حال ہی میں دیے گئے ایک انٹرویو میں انھوں نے کہا کہ وہ امریکیوں کو ناپسند نہیں کرتے لیکن حقیقت بڑی تلخ ہے اور وہ یہی ہے کہ امریکہ کی بطور ایک فیڈرل ریاست صورتحال خراب ہوتی چلی جارہی ہے۔

آئی گور کیمطابق امریکہ 6نئی ریاستوں میں تبدیل ہوجائیگا جو مختلف ممالک کی دست نگر ہونگی۔ ان ریاستوں کے خدوخال کے بارے میں آئی گور کا خیال ہے کہ پہلی ریاست جمہوریہ کیلیفورنیا ہوگی جو چین کا حصہ یا اسکی دست نگر ہوگی۔ یہ ریاست کیلیفورنیا، واشنگٹن، ایریگن، نویڈا، ایریزونا اور اوہائیو پر مشتمل ہوگی۔

دوسری ریاست ٹیکساس ریپبلک کہلائے گی جوکہ ٹیکساس، نیو میکسیکو، اوکلاہوما، لوزیانہ، آرکنساس، مسی سپی، الاباما، چارجیا، اور فلوریڈا پر مشتمل ہوگی اور یہ روس کا حصہ یا اسکے ماتحت ہوگی۔

تیسری ریاست اٹلانٹک امریکہ کہلائے گیاور یہ ریاست یورپی یونین میں شمولیت اختیار کرسکتی ہے۔ یہ ریاست شمال مشرقی امریکہ، کنٹکی اور شمالی و جنوبی کیرولیناپر مشتمل ہوگی۔

آئی گور کیمطابق چوتھی ریاست شمالی وسطی امریکی ریاست ہے۔ یہ ریاست کینیڈا کا حصہ یا اسکے ماتحت کام کریگی۔ اس ریاست میں مڈ ویسٹ، مونتانا، یومنگ اور کلوراڈو شامل ہونگے۔

پانچویں ریاست الاسکا ہوگی جو کہ باضابطہ روس کے کنٹرول میں کام کریگی۔

چھٹی ریاست ہوائی چین یا جاپان کا حصہ ہوسکتی ہے۔

روسی سکالر آئی گور نے اپنی یہ پیشین گوئی حال ہی میں ماسکو میں اپنے ایک لیکچر کے دوران دہرائی۔ انھوں نے کہا کہ وہ یہ سارا عمل 2010ء تک ہوتا ہوا دیکھ رہے ہیں۔ آئی گور کا کہنا ہے کہ وہ بذات خود امریکہ کے ٹوٹنے کیخلاف ہیں لیکن ایسا ہوتا صاف دکھائی دے رہا ہے۔

امریکہ کے بارے میں ایسی پیشین گوئیوں کا منظر عام پر آنا کوئی نئی بات نہیں۔ کئی عالمی تجزیہ نگار ایسی پیشین گوئیاں یا تجزیات کا اظہار کرچکے ہیں۔ آئی گور کی یہ پیشین گوئیاں ایسے وقت میں سامنے ائی ہیں جبکہ امریکہ میں انتخابات کے بعد نئے صدر اوبامہ حکومت سنبھال چکے ہیں۔ اور امریکی معیشت بھی شدید مندی کا شکار ہے۔ بینکنگ اور ہاؤسنگ کے شعبے بری طرح انحطاط کا شکار ہیں۔ کئی بڑے بینکوں اور مالیاتی اداروں کا دیوالیہ نکل چکا ہے۔ عراق جنگ نے امریکی معیشت کا بھرکس نکال دیا ہے۔ لیکن اب عراق سے اوبامہ فوجیں نکالنے کا عندیہ تو دے چکے ہیں لیکن انکا ابھی افغانستان سے نکلنے کا کوئی ارادہ نظر نہیں آتا۔ اور اسی لئے آئی گور یہ سمجھتے ہیں کہ افغانستان ہی امریکی افواج کا قبرستان ثابت ہوگا۔اور یہیں سے ریاست ہائے متحدہ امریکہ کے توتنے کی بنیاد پڑیگی۔

مشہور مصنف محترم انور اقبال اپنے ایک مضمون، جسکا عنوان ہے

“2025ء تک امریکی عہد کا سورج غروب ہوچکا ہوگا“

میں لکھتے ہیں کہ امریکی حکومت کے ایک تحقیقی ادارے (نیشنل انٹیلیجنس کونسل) کی رپورٹ کیمطابق2025ء تک امریکہ دنیا کی سپر پاور کے طور پر نہیں رہ سکے گا بلکہ اسکی جگہ روس اور چین جیسے ممالک لے لینگے۔

غرضیکہ یہ امریکی اور مغربی رپورٹیں ہیں جو یہ چیخ چیخ کر بتا رہی ہیں آئندہ چند سالوں میں امریکہ سیاسی و معاشی طور پر زبردست ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہونیوالا ہے۔ امریکہ کی تباہی کا آغاز تو اسی دن ہوگیا تھا جب اس نے مسلم دنیا کیخلاف صلیبی جنگ کا غیر اعلانیہ آغاز کیا تھا۔

نئے امریکی صدر اور صہیونی کٹھ پتلی اوبامہ نے اگرچہ عراق سے کچھ توبہ کرلی ہے اور وہاں سے افواج نکالنے کا عندیہ دیا ہے تاہم وہ افغانستان سے ابھی نکلنے کو ابھی تیار نہیں بلکہ اب امریکہ پاکستان پر حملے کیلئے بے چین ہے۔ اسکے لئے وہ اپنے ایجنٹوں کے ذریعے پاکستان میں ایسے حالات پیدا کررہا ہے کہ جن کی آڑ میں وہ پہلے تو پاکستان کو بری طرح غیر مستحکم کریگ اور پھر عدم استحکام اور بڑھتی ہوئی انتہا پسندی کا بہانہ بنا کر پاکستان کے ایٹمی اثاثوں پر قبضہ کی کوشش کریگا لیکن امریکہ کا یہ خواب انشاء اللہ ایک خواب ہی رہیگا۔

جو ملک افغانستان جیسے ایک چھوٹے اور پسماندہ ملک پر قبضہ نہیں کرسکا وہ پاکستان جیسے ایک ایٹمی ملک پر کیسے قابض ہوگا۔

دراصل امریکہ کی پاکستان پر موجودہ یلغار اسلئے ہے کہ وہ خود اب چراغ سحری ہے اور جسطرح چراغ کا اپنے آخری دموں پر بھبھوکا بظاہر کچھ زیادہ ہوتا ہے لیکن اسکے بعد اسکی ہمیشہ کیلئے موت ہوتی ہے۔۔ یہی صورتحال امریکہ کی بن چکی ہے ۔ امریکی حکومت کو نوشتہ دیوار سامنے نظر آچکا ہے اور اب وہ اپنے آخری ہاتھ پاؤں مار رہا ہے۔

امریکہ کی اس قریب المرگ حالت کے بارے میں فی الحال کوئی بھی یقین کرنے کو تیار نہیں، نہ تو مسلمان اور نہ خود امریکی شہری۔
لیکن جس کو اپنا شک دور کرنا ہو تو امریکہ ہی کی ایک بڑی مالیاتی کمپنی کے سابق چیف ماہر معاشیات انتھونی کیری ڈاکس کا درج ذیل یہ بیان پڑھ لے جو کہ انٹرنیٹ کے ایک بلاگ

debtredutionformula.com

انتھونی لکھتے ہیں کہ: “عام امریکی اس بات کا اعتراف کرتے ہوئے ہچکچاہٹ محسوس کرتے ہیں کہ کہ امریکی حکومت ایک مالی بحران میں داخل ہوچکی ہے۔ غالباً اسکی وجہ یہ ہے کہ عام شہری سچ نہیں سننا چاہتے ہ وہ اپنی لاعلمی سے لطف اندوز ہوتے ہیں یا پھر ایسا بھی ممکن ہے کہ جذبہ حب الوطنی سے انکی ذہن سازی ایسی کردی گئی ہے کہ امریکی معیشت ہمیشہ قوی رہیگی اور امریکہ عظمت کی ان بلندیوں تک پہنچ گیا ہے جہاں سے پستی ممکن نہیں۔ موجودہ امریکی مالی بحران کے نتیجے میں اجتماعی امریکی نفسیات کو متاثر کرنے میں کئی عوامل زیر گردش ہیں۔ عوام کا بیشتر طبقہ اس خوش فہمی میں ہے کہ آخر کار “خوش فہمی“ ہی انکا مقدر ہے۔ تاہم یہ صاف عیاں ہورہا ہے کہ ہم ایسے انجام تک پہنچ چکے ہیں اور قیامت ٹوٹنے والی پے“
ریاستوں میں علیحدگی کے رحجانات میں کئی گنا اضافہ میں لکھا کہ میڈیا اور انٹرنیٹ کے ذریعہ عوام کی توجہ اصل مسائل سے ہٹانے کی کوشش کی جارہی ہے لیکن جس تیزی سے اقتصادی حالات خراب ہورہے ہیں، لوگ زیادہ دن کھیل تماشے میں نہیں لگے رہیں گے۔ 2000ء کے بعد سے یورو کے مقابلے میں امریکی ڈالر کی قدر 30فیصد تک گرچکی ہے۔ اس وجہ سے لوگوں کا اعتبار امریکی ڈالر سے اٹھ گیا ہے اور انھوں نے امریکہ میں سرمایہ کاری کرنی چھوڑ دی ہے۔ اب وہ دن دور نہیں جب تیل پیدا کرنیوالے ممالک امریکی ڈالر میں قیمت وصول کرنے کی بجائے یورو یا چینی یوآن میں کاروبار شروع کردینگے
Submited By: MUHAMMAD
21 September 2011
ASALAMWALAKUM, PLEASE
CAN YOU MENTION THE KIDNAPPING OF FOLLOWING MUSLIMS. THEY WERE ASKING PAK MILITARY TO TO HELP THEM BRING NIZAM-E-MUSTAFA. WE DON'T KNOW WHO KIDNAPPED THEM.

(1)DR.Dr Abdul Qayyum
(2)Imran Yousafzai
(3)HAYAAN KHAN
(4)USAMA HANEEF

JZK
Submited By: MUHAMMAD
21 September 2011
صلیب اور صلیبیوں کی حفاظت کے لئے کرائے کے فوجی مہیا کرنے پر سپین کے بادشاہ نے جنرل کیانی کو "گرینڈ کراس آف میرٹ اوارڈ" دیا۔
اے صلاح الدین کے سپوتو!
اس صلیب کے رکھوالے کو اُکھاڑ کر خلافت قائم کرو۔
میڈیا آفس حزب التحریر پاکستان
Submited By: rizwan
21 September 2011
تمام سیاست دانوں کو سر عام گولی مار دی جاے تو پاکستان ٹھک ہو سکتا ہے ورنہ نہیں
Submited By: MUHAMMAD
20 September 2011
THERE SHOULD BE NO TERRORISM IN PAKISTAN IF YOU DO NOT FIGHT TALIBAN. DO NOT FIGHT TALIBAN. MAKE PEACE WITH TALIBAN. IT IS THE SUNNAT OF MUHAMMAD(SAW).IT IS HARRAM TO KILL MUSLIM.

DR. SHAHID MASOOD IF YOU ARE REALLY CONCERN FOR PAKISTAN AND WANT TO HELP THEN TRY TO UNDERSTAND WHAT IS HAPPENING NOW. OPEN YOUR EYES AND EARS.

وہ آرمی چیف جو ایبٹ آباد آپریشن سے لا علمی کا جھوٹ بولے، ریمیڈ ڈیوس کو بھگا دے، جامعہ حفصہ کی پاک دامن بچیاں بھون ڈالے، فاٹا میں خونی آپریشن کرے اور امریکی سفیر سے “ذاتی ملاقاتیں” کرتا پھرے، وہ غدار کے علاوہ کچھ نہیں۔
پاک فوج میں موجود مخلص افسرو!
کیانی سمیت دیگر غداروں کو اُکھاڑ کر خلافت کے قیام کے لئے حزب التحریر کو نصرت فراہم کرو۔
میڈیا آفس حزب التحریر پاکستان
———————————————————————————————————————
صلیب اور صلیبیوں کی حفاظت کے لئے کرائے کے فوجی مہیا کرنے پر سپین کے بادشاہ نے جنرل کیانی کو “گرینڈ کراس آف میرٹ اوارڈ” دیا۔
اے صلاح الدین کے سپوتو!
اس صلیب کے رکھوالے کو اُکھاڑ کر خلافت قائم کرو۔
میڈیا آفس حزب التحریر پاکستان
———————————————————————————————————–

O PAK MUSLIM ARMY DO NOT FIGHT YOUR

BROTHERS THEY ARE ONLY TRYING TO DO

WHAT YOU SHOULD BE DOING IE BRING NIZAM-

E-MUSTAFA OR KHILAFAT IN PAKISTAN.

TALIBAN ARE GOOD FIGHTERS LIKE BALLOUCH

REGIMENT, LIKE PUNJAB REGIMENT, LIKE

SINDH REGIMENT. INCLUDE THEM IN YOUR

ARMY AS “TALIBAN REGIMENT” AND THEN GO

TO AFGHANISTAN TO FIGHT THE REAL ENEMY,

AMERICA. IT IS HARAM FOR MUSLIM TO

FIGHT MUSLIM. MAKE PEACE WITH TALIBAN,

YOUR MUSLIM BROTHERS. YOU ASKED THEM

AND THEY CAME FROM ALL OVER THE MUSLIM

WORLD TO ASSIST YOU FIGHT KAFIR RUSSIANS

BEFORE SO WHAT IS WRONG NOW TO ACCEPT

THEIR JIHAD AND FIGHT KAFIR AMERICA IN

AFGHANISTAN.
Submited By: Asghar Ali Butt
17 September 2011
Dr.sb why u r not in your original spirit? kindly show more true to Pakistani people.
Submited By: amir jafri
14 September 2011
Mukhlisaana mashwaray:

1. Khuud apnay aap ko Daktar naa likhain...Urdu mein daktar ko Allama kehtay hain..Kya koi apnay aap ko Allama kehlvaa saktaa hai? Yeh Izzat doosray karain toa shaan aur hai.

2. aap bohut oonchaa, jaldi jaldi aur Dominating andaaz mein baat kartay hain..dheemay aur pur vaqaar rahain..quraishpur sahib kee misaal saamnay rakhain.

3. Aap Facilitator hain...statements kum dein aur mukhtasir open-questions karain..LEAD naa karain.

Phir InshaAllah aap kee tauqueer aur shohrat mein mazeed izafaa ho gaa.

Ummeed hai yeh saaf goi, iss munaafiquat bharay muaashray mein, aap apni zaat pur aitraaz tssavur naheen karain gey. Javaab zaroor deejay gaa taakay mera hausla barhhay aur meri Pakistan aur islam se muhabbat aap pur aashkaar ho.
Submited By: SHAFIQ
29 August 2011
Dr Shahid Ur So Nice God Bless U
Submited By: tusif
28 August 2011
suca aur saca pakistani
muhklas aur pakistan ka hamdard
imandar aur carption ke khalaf
good work dr. saib
Submited By: Tariq (Lahore)
20 August 2011
Great man
Submited By: Muhammad Imran
12 August 2011
sir gee plz visit it and get some education.
and correct your record.ok


http://www.youtube.com/watch?v=DVkC-8r_ND0
Submited By: faisal
08 August 2011
sir... what u think about new provinces in punjab are suitable for pakistan.... and we all aware the horrible situation of country
Submited By: Bilal
03 August 2011
LOVE YOU DOCTOR!
Submited By: Bilal
03 August 2011
LOVE YOU DOCTOR!
Submited By: shabbir
31 July 2011
dr shahid is my fav anch per.he is a brave man and honest for pakistan.
Submited By: Muhammad Israr Ahmad
27 July 2011
very outspoken and patriotic Pakistani.....I like his love for this land...may Allah bless you Dr. sahib
Submited By: zeeshan haider
26 July 2011
Cool and professional anchor
Submited By: AKMAL AWAN ITALY
25 July 2011
WELL DONE.
Submited By: Ghani
21 July 2011
Where you sir? when you will in action, we are waiting.
Submited By: zeeshan haider
19 July 2011
I LOVE YOU Dr Shahid Masood Khan
Awaz.tv
Privacy Policy: We use third-party advertising companies to serve ads when you visit our Website. These companies may use information (not including your name, address email address or telephone number) about your visits to this and other Web sites in order to provide advertisements about goods and services of interest to you. If you would like more information about this practice and to know your choices about not having this information used by these companies, click here.

Disclaimer: Awaz.tv is not responsible for any content linked to or referred to from these pages. All videos, live tvs, blogs or video links point to content hosted on third party websites or members. We are using third party links for live tvs. Users who upload these videos or blogs agree not to upload illegal content when creating their user accounts. Awaz.tv does not accept responsibility for content hosted on third party websites or by the members. If you have any questions please contact us.
Copyright © 2000-2014 AWAZ.TV. All rights reserved unless where otherwise noted.